The title of your home page You could put your verification ID in a comment Or, in its own meta tag Or, as one of your keywords Your content is here. The verification ID will NOT be detected if you put it here.

Total Pageviews

Google Add

Thursday, August 9, 2012


Posted: 25 Jul 2012 01:18 PM PDT
بسم اللہ الرحمن الرحیم

جہاں سے وادی استور شروع ہوتی ہے
استور سے پہلے تنگ کھائیاں ختم ہو چکی تھیں کیونکہ اب ہم تھوڑی بلندی پر تھے اور ایک سرسبز وادی ہمارا استقبال کر رہی تھی۔ ویسے تو ”استور“ پوری وادی کا نام ہے مگر ایک استور شہر بھی ہے، جو کہ 2004ء میں ضلع بن گیا تھا۔ استور شہر سطح سمندر سے تقریباً 2400 میٹر بلند ہے۔ کہا جاتا ہے کہ کسی زمانے میں چین اور افغانستان سے آنے والے تاجر جو کہ آگے کشمیر جاتے تھے، استور ان کے لئے ایک اہم سرائے کی حیثیت رکھتا تھا۔

ہم شام کے چھ بجے استور پہنچ گئے۔ استور کے مین بازار میں ہی گاڑی کھڑی کی اور سلیم دیگر علاقہ جات کی معلومات اکٹھی کرنے لگ پڑا۔ مجھے اب غصہ آ رہا تھا کیونکہ میرے خیال میں دیگر علاقوں کی بجائے اگر ہوٹل کی معلومات لے تو کم از کم پیٹ میں دوڑنے والے چوہوں کو تو کچھ سکون ملے۔ ہم سب گاڑی سے باہر نکلے ہوئے تھے۔ گاڑی کے شیشوں پر کافی دھول پڑی ہوئی تھی، ایک ملنگ شیشوں پر لائنیں لگانے لگا۔ جیسے ہی ایک لائن لگاتا تو ساتھ کہتا ”یہ ہو گیا“۔ یہ ہو گیا، یہ ہو گیا اور یہ ہو گیا کے ساتھ ساتھ لائنیں لگا رہا تھا تو ایسا معلوم ہوتا جیسے کوئی منتر پڑھتے ہوئے گاڑی پر جادو کر رہا ہے۔ کچھ مقامی لوگ اسے دیکھ دیکھ کر ہنستے مگر ہمیں سمجھ نہیں آ رہی تھی مست ملنگ آخر کر کیا رہا ہے۔ تھوڑی دیر ”یہ ہو گیا“ پر غور کیا تو پتہ چلا کہ اس ملنگ نے لائنوں کی مدد سے ہیلی کاپٹر بنا دیا ہے۔ اتنی تفصیل سے ہیلی کاپٹر بنایا کہ میں حیران رہ گیا کہ اس نے ہیلی کاپٹر کی چھوٹی چھوٹی چیزیں بھی بنا دیں۔ ملنگ ابھی ادھر ہی تھا تو عبدالرؤف اسے گاڑی کے پیچھے والے شیشے کی طرف لے گیا اور اسے کہتا ہے کہ دیکھو کتنی زبردست و بہترین دھول پڑی ہے۔ یہاں تو بڑا نکھرتا ہوا ہیلی کاپٹر بنے گا۔ عبدالرؤف کا اتنا کہنا تھا کہ ملنگ شروع ہو گیا، یہ ہو گیا، یہ ہو گیا۔
”یہ ہو گیا“ کا جادوائی عمل دیکھنے کے بعد میری نظر ایک بینر پر پڑی۔ یہ ”ایس کام“ کی اشتہاری مہم کا حصہ تھا۔ اسی بینر سے مجھے پتہ چلا کہ استور میں ایس کام فون کے ساتھ ساتھ انٹرنیٹ کی سہولت بھی فراہم کر رہا ہے۔ سونے پر سہاگہ ہمارے موبائل نیٹ ورک بھی استور میں چل رہے تھے۔ اس وقت یہ نیٹ ورک کم اور میرے ارمانوں کے قاتل زیادہ تھے۔

استور کی کچہریاں
سلیم ادھر ادھر کی کافی معلومات لے چکا تھا، ہمارا پروگرام تھا کہ کچھ کھانے کے بعد ابھی ”راما“ چلے جائیں کیونکہ راما تک ہماری اپنی گاڑی جائے گی اور پھر وہاں جا کر کیمپنگ کی جائے۔ خیر انتظامیہ (سلیم) کی منت کی کہ باقی سب بعد میں پہلے کسی ہوٹل کا پتہ کرو تاکہ کچھ پیٹ پوجا کی جائے۔ ہمیں کسی نے بتایا کہ فلاں طرف جاؤ ادھر ہوٹل ہے۔ ہم سب گاڑی سمیت ادھر چلے گئے۔ کچھ گاڑی سے اتر کر ہوٹل کی معلومات لینے چلے گئے، میں گاڑی میں ہی بیٹھا تھا کہ میری نظر ایک بورڈ پر پڑی۔ پہلے تو مجھے لگا کہ بس ویسے ہی بورڈ پڑا ہوا ہے مگر غور کرنے پر پتہ چلا کہ ہم واقعی استور کے ”سیکریٹیریٹ“ میں کھڑے ہیں۔ یہاں کا سیکریٹیریٹ دیکھ کر میں حیران رہ گیا کہ ہمارے ادھر پنجاب میں تو ایسے کمرے میں جج کا ریڈر تک نہیں بیٹھتا اور یہ پوری کی پوری عدالتیں ایک دو کمرے اور چھوٹے سے احاطے پر محیط ہیں۔ خیر اس وقت عدالتوں اور سیاست پر سوچنے سے زیادہ ضروری کام کھانا تھا کیونکہ ہمیں شدید بھوک لگ رہی تھی۔ اتنے میں سلیم بھی آ گیا اور بتانے لگا کہ یار ادھر تو ایک چھوٹا سا ہوٹل ہی ہے۔ مجبوری ہے، اسی پر گذارہ کرنا پڑے گا۔ اجی ہمارا کیا ہے، جب سفر پر نکلے ہیں تو پھر چھوٹا ہوٹل ہو یا دال سبزی، سب چلتا ہے، بلکہ دوڑتا ہے، مگر ہمارے ساتھ کچھ ایسے یار لوگ تھے جن کا ٹور فطرت کی قربت سے زیادہ اچھا کھانا اور ”شام و شام“ سونا ہوتا ہے۔ خیر یہاں تو مجبوری تھی تو گویا ان کا آج کا ”ڈنر“ تو مجبوری کی نظر ہو گیا اور ہم دونوں ڈرائیوروں کو گاڑی میں چھوڑ کر کیونکہ گاڑی کے ایک شیشے کا تالا خراب ہو گیا تھا اور کوئی بھی آسانی سے گاڑی میں گھس سکتا تھا اس لئے ان دونوں کو گاڑی کے پاس چھوڑ کر ایک ایسے ہوٹل پہنچے جہاں پر رسوئی اور باقی سب کچھ ایک ہی بڑے سے کمرے پر مشتمل تھا۔


صاحب بیٹھو! بتائیں کیا کھائیں گے؟
کھانے میں کیا کیا ہے؟
”سب کچھ ہے“، دال ہے، چنے ہیں، دال چنے ہیں اور چنے دال ہیں۔ :-)
یہ بتاؤ تیار کیا ہے۔
سب کچھ تیار ہے۔
اچھا ایسا کرو کہ تین پلیٹ چنے اور تین پلیٹ دال لے آؤ اور باہر گاڑی میں ہمارے دو دوست ہیں، انہیں ادھر ہی کھانا پہنچا دو۔
آڈر میں میں نے لقمہ دیا کہ ایسا کرو اگر پیاز ہیں تو تھوڑے سے پیاز پہلے ہی کاٹ کر لے آؤ۔ یہ پیاز کسی سلاد شلاد کے زمرہ میں نہیں منگوائے تھے بلکہ یہ ایک احتیاطی تدبیر تھی۔ اللہ کے فضل سے مجھے آج تک بلندی کے اثرات نہیں ہوئے یعنی بلندی پر چڑھتے ہوئے اکثر لوگوں کے تھوڑے تھوڑے کان بند ہوتے ہیں یا پھر بلندی پر پہنچ کر آکسیجن اور ہوا کے دباؤ کی کمی کی وجہ سے سر بھاری بھاری سا ہو جاتا ہے اور کئی لوگوں کو شدید دردِ سر بھی ہوتا ہے، مگر میرے ساتھ ایسا کچھ نہیں، پھر بھی پیاز اس لئے منگوائے تھے کہ تھوڑے سے کھا لوں تاکہ اگر اس دفعہ کوئی اثرات ہونے ہیں تو اس سے تھوڑا بہت بچا جا سکے۔ گو کہ آج سے پہلے بلندی کے اثرات نہیں ہوئے مگر احتیاط کرنے میں کوئی حرج نہیں۔ آپ کو بتاتا چلوں کہ پیاز بلندی کے اثرات کم کرنے کا آزمودہ طریقہ ہے۔ اگر آپ نے تھوڑا پیاز کھا رکھا ہے تو اس سے بلندی کے اثرات کم ہونگے اور اگر اثرات ہو چکے ہیں تو پھر بھی پیاز کافی مفید ثابت ہوتا ہے۔


وادی استور
کھانے کا انتظار کرتے کرتے تقریباً ایک گھنٹہ گزر چکا تھا، سورج اپنی منزل کی طرف رواں دواں تھا، اہل استور سے ”کل پھر ملیں گے“ کا کہہ کر اپنی کرنیں کسی اور دیس برسانے جا رہا تھا۔ ہوٹل کی ایک چھوٹی سی کھڑکی سے ایک کھائی نظر آرہی تھی جو پیغام دے رہی تھی کہ میں جلد ہی ”تاریک نگر“ بن جاؤ گی۔ اسی وقت عبدالرؤف رسوئی کی طرف گیا اور واپس آ کر انکشاف کیا کہ کچھ بھی تیار نہیں تھا اور ہوٹل والا ابھی تیار کر رہا ہے۔ خیر صبر کے سوا کوئی چارہ نہیں تھا۔ یہیں پر ہمارے ایک دوست طاہر بٹ کا ایک مرتبہ پھر فون آیا۔ وہ کیا ہے کہ جناب ہماری طرح کے ”ملنگ“ نہیں، اتنے لمبے سفر اور خاص طور پر اتنے دن گھر، بچوں یا ”کسی اور“ سے دوری برداشت نہیں کر سکتے یا پھر شاید ”کسی اور“ سے اجازت نہیں ملتی، بہرحال ان میں سے کسی بھی وجہ یا وجوہات کی بنا پر وہ ہمارے ساتھ نہیں تھے مگر لمحہ بہ لمحہ ہماری خبر گیری کرتے۔ ان کی اتنی زیادہ خبر گیری پر ایک دفعہ تو میں کہنے لگا کہ اوہ بٹ! یار بن یار، ”بے بے“(ماں) نہ بن۔


اللہ اللہ کر کے کھانا آیا۔ دال کسی کام کی نہیں تھی لیکن چنے کافی مزیدار معلوم ہوتے تھے۔ پتہ نہیں واقعی مزے کے تھے یا پھر ہماری بھوک انہیں مزے کا بنا رہی تھی۔ بہرحال ہم نے کھانا کھایا اور ہوٹل سے نکل کر گاڑی کی طرف جانے لگے تو سلیم کے ہاتھ میں ایک لفافہ دیکھا۔ پوچھنے پر سرکار فرمانے لگے کہ یہ روٹیاں ہیں کل کے لئے۔۔۔
اوہ تیری خیر ہو۔ یہ کیا کہہ رہا ہے؟
ہاں تو ٹھیک ہے نا۔ راما میں کوئی ہوٹل نہیں۔ کل سالن خود بنائیں گے اور یہ روٹیاں۔۔۔
یار کل تک تو یہ ”پاپڑ“ بن جائیں گی۔
فکر نہ کرو، اس طرح پیکنگ کی ہے کہ کچھ نہیں ہو گا۔
جو بھی ہو ہم سے کل باسی روٹیاں نہیں کھائی جائیں گی۔
کوئی بات نہیں، نہ کھانا، میں کونسا زبردستی کر رہا ہوں۔ کل جب بھوک لگے گی، یہ روٹیاں تو کیا اگر دس دن پہلے کی بھی ہوں تو وہ بھی کھا جاؤ گے۔

ہم باتیں کرتے کرتے گاڑی تک پہنچے۔ سب گاڑی میں بیٹھ گئے تو کسی نے ڈرائیور سے پوچھا کہ آپ لوگوں کو کھانا مل گیا تھا۔ ڈرائیور نے رونے جیسی صورت بنا کر بتایا کہ کوئی نہیں آیا۔ ہمیں ہوٹل والے پر غصہ آیا اور خود پر شرمندگی۔ خیر سلیم اور عبدالرؤف ڈرائیوروں کو ساتھ لے کر کھانا کھلوانے چلے گئے اور ہم گاڑی میں ہی بیٹھے رہے۔ گو کہ ڈرائیوروں سے معاہدہ تھا کہ انہوں نے خود اپنے کھانے کا بندوبست کرنا ہے، مگر بھائی جان اخلاق (اخلاقیات) تھے کہ ہمیں اس چیز کی اجازت نہیں دے رہے تھے کہ ہم علیحدہ کھائیں اور ڈرائیور علیحدہ۔ ڈرائیور کھانا کھانے جا چکے تھے۔ سورج ڈھل چکا تھا۔ ہم جتنی جلدی کر رہے تھے کہ روشنی ہوتے ہوئے راما پہنچ جائیں، اتنی ہی دیر ہو رہی تھی۔

وادی استور کا خوبصورت منظر
ڈرائیور آئے تو اللہ کا نام لے کر رات کی تاریکی میں راما کی طرف سفر شروع ہوا۔ استور سے راما تقریباً آٹھ سے دس کلومیٹر دور ہے مگر رات کی تاریکی، کہیں کہیں سے ٹوٹی سڑک اور ٹھیک طرح سے رستہ معلوم نہ ہونے کی وجہ سے ہم نے یہ سفر تقریباً ایک سے ڈیڑھ گھنٹے میں طے کیا۔ آبادی میں موجود بھول بھلیوں کی وجہ سے جی پی ایس پر سمجھ نہیں آ رہی تھی کہ کونسا رستہ ٹھیک اور شارٹ کٹ ہو گا۔ اس لئے جو بھی مقامی ملتا اس سے پوچھ لیتے کہ راما کی طرف کونسا رستہ جاتا ہے۔ ہر کوئی یہی کہتا کہ بس اس سڑک کو نہ چھوڑنا تو سیدھے راما پہنچ جاؤ گے۔ مگر اب کیا کریں؟ سڑک ٹی کی شکل میں ہے، ایک دائیں جا رہی ہے تو ایک بائیں اور سامنے تو پہاڑ ہے۔ اب فیصلہ مشکل تھا۔ بہرحال دو وجوہات کی بنا پر بائیں طرف مڑ گئے۔ ایک تو یہ سڑک کچھ بہتر تھی اور دوسرا سو میٹر کے فاصلے پر کچھ مکان نظر آ رہے تھے۔ آگے گئے، گاڑی روکی تاکہ کسی سے رستہ پوچھا جائے، مگر جیسے سب ہم سے روٹھ کر گھروں میں چھپ گئے تھے۔ ویران سڑک اور اتنی چھوٹی کہ واپس مڑ بھی نہیں سکتے تھے۔ سڑک سے بیس پچیس فٹ بلندی پر ایک گھر تھا۔ جس کی بتیوں کا چال چلن بتا رہا تھا کہ اس گھر میں کوئی نہ کوئی ضرور ہے اور جاگ بھی رہا ہو گا۔اب گاڑی سے نکلے تو کون نکلے؟ سلیم اور عباس ظاہر ہے ”جوان بزرگ” ہیں تو پھر یہ کام انہیں نے کرنا تھا۔ دونوں اترے، ایک لمبے سفر کی تھکاوٹ کی وجہ سے مرتے مرتے اس گھر کی طرف جا رہے تھے اور پھر ہماری آنکھوں سے اوجھل ہو گئے۔ پانچ دس منٹ بعد واپس ایسے آئے جیسے وہاں سے امرت پی کر تازہ دم ہو گئے ہیں۔ دونوں بڈھے کھوسٹ بڑے خوش خوش دوڑے آ رہے تھے، واپس پہنچ کر کہنے لگے ”چھڈو راما نوں“ ادھر ہی کوئی جگہ دیکھو اور کیمپ لگاؤ۔ ساتھ ہی کہتے ہیں ہم ٹھیک طرف جا رہے ہیں، راما ادھر ہی ہے۔ ڈرائیور نے گاڑی چلا لی۔ مگر ان دونوں نے رستہ معلوم ہونے کی جو رنگینی بتائی تو میں اور عبدالستار ان دونوں کو گالیاں دیتے ہوئے، چلتی گاڑی سے مڑ مڑ کر اس گھر کو دیکھنے لگے۔ میں نے دل ہی دل میں سوچا! کاش کہ رستہ معلوم کرنے میں خود چلا جاتا۔


Post a Comment

Add Of The Day