The title of your home page You could put your verification ID in a comment Or, in its own meta tag Or, as one of your keywords Your content is here. The verification ID will NOT be detected if you put it here.

Total Pageviews

Google Add

Thursday, August 30, 2012


Build Free Easy Websites
to Promote Your Business

Build Free Easy Websites to Promote Your Business
So you might think you might like to build free easy websites to promote your business. If you have a small or medium sized local business in Aberdeen, Scotland or any other similar sized location in another part of the globe then it is only your mind that prevents your business from going national or international. A well-designed slick website that performs flawlessly need not result in you filing for bankruptcy since you can easily build your own website from website designing professionals and specific sites that allow visitors to build free easy websites. 
The internet allows you to deliver your products and services across geographical borders, and you too can do the same by building a business website that offers a virtual storefront to your existing clients as well as to potential clients that would have otherwise never noticed your presence in the marketplace. Whether you run a traditional business or plan to start an online venture to cater to national or global clients, a well-designed website hosted on a dedicated or shared small business web hosting server running at optimum speeds is half the battle won.  
Simple logic dictates that you cannot provide resources to market your business through various media such as television or print over a longer period of time. However, the internet offers you a very cost-effective solution to not only reach out to targeted traffic in Scotland but over across to the rest of the UK and the entire globe too. All you need to do is to seek out an expert website designing and development company that can utilise the best website builder software as well as locate sites that allow one to build free easy websites so as to end up with an eye-catching business website created at a very cost-effective price. 
An expert designer can easily use software that offers virtual showroom templates to welcome your visitors with an attractive home page. A simple business website that just offers information to your visitors can be set up within a matter of hours by using readymade templates. However, if you wish to incorporate a virtual showcase that allows your visitors to choose and buy products and services right off your website then you need to incorporate ecommerce web site software into your website. Even though you can use the services offered by sites that allow you to build free easy websites directly even if you do not know the first or last word in html programming, it is always better to use an expert since you will be rewarded with a professional-looking and error-free website at the first try itself. 
Again, it is simply not enough to let your website designing company create a website by using sources that allow you to build free easy websites. Your website also needs to land up on the very first results page during any keyword search since if your website lands up with very low rankings then it is as good as not having a website at all. Your website designing company will use the services of SEO or Search Engine Optimization experts to insert vital keywords into your website so as to jump over your competition in Aberdeen, Scotland and in fact others around the globe to end up with very high search rankings. This will boost your chances of getting noticed by several new visitors that have a high potential of turning into regular customers, provided of course that your website works like a charm. 
Improving your rankings involves some serious internet research as well as keyword research to match the text present in your business website with words typed in search boxes of major search engines. High quality content that is regularly updated will please search engine robots and convince them that your business website is authentic. Thus, locating a website directly that allows you to build free easy websites will not ensure instant recognition on the World Wide Web or even in your local markets. Instead, hiring a capable web designer that simply utilises website creation software along with readymade templates to lower your costs, while infusing your website with top-quality content relevant to your business model, will ensure that you reach out to your target audience quickly and that too in a very cost-effective manner. 
If you need to keep tight control over costs then you need to increase your purchases and sales to gain vital leverage with your suppliers and your clients too. If your small or medium sized business is located in Aberdeen, Scotland then you can still conquer local, national and international markets from that scenic corner in the world. All you need to do is to hire a proficient web designer with SEO capabilities that also utilises services offered by sites to build free easy websites so as to design and maintain a perfect business website without breaking your financial back.
Is there another way? Wouldn't it be great if all the above services could be combined into a single, easy to use, affordable package that a business owner could develop/maintain? Indeed, if you wish do build a website to establish yourself online to expand your reach into the global ecommerce economy, we use it in helping small businesses -- and teaching you how to use it is included in our service.

Building a Business Website

Building a business website may seem like a daunting task. You may use the internet quite a bit and not know how the websites you visit were created. But don't let that dissuade you from building a business website for your business. The advantages are both significant and long lasting. Even if you don't know any HTML, or even what HTML means, you can create a website that will make you proud. There are plenty of resources available to help you.
Building a Business WebsiteThe basic elements to build a business website are getting your domain name, choosing a web host, and creating the site with all its content. These are all things that you can do on your own, but there are plenty ofresources available to help you with every step - including one stop shoppingfor all the services and resources combined --including the business tools you need to grow your business.

When you get a domain name, you choose the name of your website, whether it'syour-business-website.comor your-business-website.co.uk, or both. Many domain names are already taken, so this phase will involve some research to find a domain name that is available. Once you find a domain name that is available that you like, registering it is a matter of finding a domain host, entering your information, and paying a yearly fee so that nobody else is able to use the domain name.

When you have a domain name and have registered it, the next step is to choose a web host. This is the company that has the physical computer servers that contain the information that makes up your website. The servers are connected to the "internet backbone" by high speed links so that people from anywhere in the world can get to your website quickly. The web host makes sure that your site stays up and running, and if you sell products on your website, the web host often is the provider of shopping cart e-commerce software.

The final step is actually building the website. Numerous options exist for doing this. Some people who know HTML can create a website "from scratch." Others hire a designer, describe what they want, and let the website designer take over the task. Still others create a website by using premade templates or special page design software that does not require knowledge of HTML. And finally, there is a service that also includes all of the above and the training you need to be able do to do it all yourself -- or with just a little help to get you in front of your existing and potential customers and clients quickly.

Building a business website doesn't have to be a difficult experience. Most business owners use the internet enough to know what they like in a website and what they do not like. Whether you create a website yourself or hire someone to do it for you, start out by writing down what youwant your website to look like in terms of colors, pictures, backgrounds, and fonts.

Also write down what you want the website to do. Should it be for informational purposes only? Or do you want to include a blog and/or social media to help build interest and traffic? Do you plan to sell products on your website? Describe what you want the visitor's experience to be when they reach your website. Success in building your business website startswith knowing what you and your clients/customers want.

Can You Build Free Websites ? Yes you Can!

Can you build free websites online? For those who want to build their own website, it might seem hard. Once upon a time, this might have been hard. However, this isn't the case any longer. There are many websites that help you with what you wish to do. What are some of the best sites out there which can help yoWoman smiling up from computeru build the website that you so wish to build?
You simply need to search the internet. When one does this, one will find that they have enough steps that can help you to do what it is that you need to in order to set up the perfect website. The first thing you do is you choose the designs that they have for you to choose from. Once you do this, the next thing is that you need to then customize it.
There are many ways that one can customize this.
Here is where you can add your logo or graphics to it among other things as well. Once you do this, it's time to show the world what you wish to show and all this is free. There are also free web building websites available if you know where to look. With this, you find that you will get a free domain name. You are able to add your own things to it like MP3 and so much more. When you do this, then you can really make it as custom as you can. You can promote your site as well with a message center and an invitation tool. You can even add a third party content such as Youtube and so much more than that. If you want to put this on social networking sites, you can do this as well. When you get their premium services, you get so much more.
Some sites of course are more user friendly than others.
This is how it works. You choose the skins that you want to use. Then, what you do is that you go about and upload the text and pictures that you wish to add. After you do that, your website is ready to go for you to show the world. With this, you get your own domain name. You also get to customize it as well. Then, you can optimize it for search engine which is the big rave nowadays.
Just like with the other sites that many use, you can do it really easily. The first thing is just picking the custom design that you so choose. After a person does this, it's then time to customize it. However, with this site you can let them do it for you. Last, you are then ready to show the world who you are and what you or your services are all about.
Some well known companies to build free websites that we have found people have created their sites at were done by just researching on the internet for the best company. Therefore, you choose your design. There are many that you can choose from. Just like the others, you can then add different things from text to images and to other things as well. After this, you are all set to go live.
You can buy domains and hosting as well. It costs you, but you get one of a kind service which is essential when you are going to build your own website. This is something that every person should want. Buy the domains that you wish or sell your domains. Whatever you do, you do it with a touch of professionalism.
When you want to build free websites that draw people in, you want something that is easy to use and so much more. When you do this, you will find that you will be able to communicate with the world and show them what you have to offer to them.
It seems many people prefer to click on a website and now this can be made possible with just a few different steps. Most of the steps are the same; however, there are many that have different levels of buttons and tutorials for a person to use in order to go about and create the perfect website.
In order to build free websites just play around before you choose which is the one you wish to use.  Or  Contact me, I'll put you on the right track.

Tuesday, August 21, 2012

JF5FuQTT1r2irAm3UxSd0yPG74A
The title of your home page You could put your verification ID in a comment Or, in its own meta tag Or, as one of your keywords Your content is here. The verification ID will NOT be detected if you put it here.

Wednesday, August 15, 2012

Monday, August 13, 2012

Women vs Men - Very Funny

Women Friends chatting in office.


To add your comments click here


Also See
Fishing in Saudi Arabia – Funny Story

Posted: 28 Jul 2012 03:42 PM PDT

راما کا خوبصورت میدان
وہ کسی کا گھر تھا یا کچھ اور بہرحال جب وہاں سے راما کا راستہ معلوم کرنے کے بعد سلیم اور عباس گاڑی میں پہنچے تو سب سے پہلے انہوں نے یہی بتایا کہ ہم ٹھیک طرف جا رہے ہیں۔ گاڑی چل پڑی اور ساتھ ہی بڑے چہک چہک کر بتانے لگے کہ بھلا ہمیں راستہ کس نے بتایا ہے؟ سب لوگ سارا دن سفر کی وجہ سے تھکے ہوئے تھے اور نڈھال اپنی اپنی سیٹوں پر بیٹھے کم اور لیٹے زیادہ تھے۔ کسی نے بھی ان کے سوال کا نوٹس نہ لیا تو وہ خود ہی بول پڑے کہ ہمیں رستہ ”پریوں کے ریوڑ“ نے بتایا ہے۔ پریوں کا ریوڑ؟؟؟ سب کے کان کھڑے ہو گئے۔ میں اور عبدالستار پوری بات بتاؤ، پوری بات بتاؤ، کہتے ہوئے مڑ مڑ کر اس گھر کو دیکھنے لگے، جہاں سے ریوڑ برآمد ہوا تھا۔ جب تجسس کا پیمانہ لبریز ہوا تو میں نے تمام ادب و احترام وادی کی سب سے تاریک کھائی میں پھینکتے ہوئے کہا کہ اب آپ تفصیلی ”بکواس“ فرمائیں گے یا میں گاڑی رکوا کر خود دیکھ آؤں۔ وہ دونوں بول پڑے کہ جب ہم اس گھر کے دروازے پر پہنچیں تو دروازہ کھلا تھا، سامنے کوئی نظر نہیں آرہا تھا مگر اندر سے بہت زور سے ہنسنے کی آوازیں آ رہی تھیں۔ دروازے پر کوئی گھنٹی نہیں تھی اور دروازہ ایسا تھا کہ کھٹکھٹانے سے اندر اطلاع نہیں ہو سکتی تھی تو ہم نے زور سے ”السلام علیکم“ کہا ہی تھا کہ اندر سے پانچ سات پریاں، بغیر سر ڈھانپے اور ننگے پاؤں ”وعلیکم السلام“ کہتی اور دوڑتیں ہمارے پاس آ کھڑی ہوئیں۔ سلیم نے بتایا کہ ایک دفعہ تو میرے پیروں تلے سے زمین بھی نکل گئی کیونکہ آٹھ دس سال پہلے تک تو یہ وہ بستیاں تھیں جہاں پر عورت ذات ایسے رہتی کہ جیسے یہاں پر عورتیں ہیں ہی نہیں۔ مگر اس طرح پریوں کا ریوڑ دیکھ کر میرے تو ہوش ہی اڑ گئے اور مجھے ایک دفعہ لگا کہ یقینا یہ کوئی خواب ہے یا پھر میں کوہ ہمالیہ کی بجائے کوہ قاف پہنچ چکا ہوں۔ بہرحال ہم نے سہمے ہوئے انداز میں پوچھا کہ ہمیں راما جانا ہے اور راستہ نہیں معلوم۔ پریوں کو لگا کہ جیسے یہ دونوں پیدل ہیں اور راستہ بھول کر ہماری سلطنت کے دروازے پر پہنچ آئے ہیں تو گویا وہ اپنی اس سوچ پر زور سے ہنسیں۔ شاید ان کی سوچ کو عباس بھانپ گیا اور بولا کہ ہم گاڑی میں پانچ دس لوگ ہیں اور وہ نیچے اندھیری سڑک پر ہماری گاڑی کھڑی ہے، ہمیں راما جانا ہے، راستہ نہیں معلوم، بس پوچھنے ہی آئے تھے۔ پریوں نے اوپر سے ہی تھوڑا آگے ہو کر نیچے کھڑی گاڑی کو دیکھا اور کہا کہ آپ ٹھیک طرف جا رہے ہیں اور آپ کی گاڑی راما تک چلی جائے گی۔


عباس اور سلیم نے اتنی بات ہی بتائی تھی کہ میں بولا کاش جب پریاں گاڑی کو دیکھنے کے لئے آگے ہوئی تھیں تو تب ہم اوپر دیکھ رہے ہوتے تو ہمیں بھی دیدار کا شرف حاصل ہو جاتا، خیر پریوں نے کہا بھی ہے اور گاڑی پر نظر کرم بھی کی ہے تو پھر یقیناً ہم راما پہنچ ہی جائیں گے۔ ویسے یارو! تم دونوں تو شادی شدہ تھے، بھلا جب پریاں باہر آئیں تھیں تو انہیں کہنا تھا کہ
”وہ کیا ہے کہ ہ ہ ہ ۔۔۔ وہ ہ ہ ہ ۔۔۔ ہم کچھ پوچھنے آئے تھے مگر بھول گئے ہیں، نیچے گاڑی میں ہمارے دوست ہیں، انہیں یاد ہو گا کہ ہم کیا پوچھنے آئے تھے، آپ یہیں ٹھہرو اور کہیں نہ جانا، ہم نیچے گاڑی میں جا کر انہیں بھیجتے ہیں۔“
”کمبختو“ یہ کہہ کر واپس آ جاتے اور مجھے پریوں سے راستہ معلوم کرنے بھیج دیتے، چلو اسی بہانے ہو سکتا ہے کہ کوئی پری اس ”جن“ پر فدا ہی ہو جاتی۔ :-) ہا ہا ہا ہا ہا۔۔۔ کر لو گل! او نالائقو، تہانوں نئیں پتہ۔ یہ پریاں صدیوں بعد پرستان سے نکلتی ہیں اور تم لوگوں نے صدیوں بعد ملنے والے اس موقعہ کو بھی ضائع کروا دیا۔ کاش میں خود راستہ معلوم کرنے چلا جاتا۔ اتنے میں گاڑی ایک موڑ مڑی اور وہ گھر وادیوں کی گہرائیوں میں کہیں کھو گیا۔ ہم پل دو پل کے مہمان تھے اور ہماری منزل ”ٹھہرنا“ نہیں۔ ہم ایسے مسافر ہیں جو کہیں تھوڑی دیر راستہ معلوم کرنے جیسا سستا تو سکتے ہیں مگر جلد ہی ہمیں منزل کی طرف چلنا ہوتا ہے۔ یہ راستے کے اتار چڑھاؤ تو آتے ہیں، کہیں آہستہ سے تو کہیں تیزی سے گزرنا ہے اور ان عارضی لمحات کو بھول کرنظر تو بس اپنی منزل پر رکھنی ہے۔ یہاں بھی ایسا ہی ہوا، اِدھر گاڑی موڑ مڑی اُدھر ہم بھول بھی گئے کہ پچھلے موڑ پر کیا ہوا تھا۔ اب ہماری سوچیں راما پر مرکوز تھیں، جہاں خوبصورت سرسبز پہاڑ، پہاڑوں کی چوٹیوں پر چاندنی میں نہاتی برف، نیچے وسیع جنگل، جنگل میں منگل کرتا ہری گھاس والا میدان، میدان کے آس پاس جنگلی پھول، جھرنوں کی صدائیں اوران صداؤں پر جھومتا طلسم تھا۔ جو ہمیں سب کچھ بھولنے پر مجبور کر رہا تھا اور ایک بہت زبردست طاقت والا مقناطیس ہمیں اپنی طرف کھینچ رہا تھا جبھی تو ہم رات کی تاریکی میں بھی سفر کیے جا رہے تھے۔ ایک طرف بلندوبالا پہاڑ تو دوسری طرف ہزاروں فٹ گہری کھائی۔ ٹوٹی سڑک اور سڑک سے گزرتے چھوٹے چھوٹے نالے۔ مگر پھر بھی ہمارا سفر جاری تھا۔


راما میدان کے کنارے بہتا ہوا پانی
راما سطح سمندر سے تقریباً 3175 میٹر بلند ہے۔ رات کے تقریباً دس بجے ہم راما پہنچ گئے۔ پہنچ کر معلوم ہوا کہ راما میں پی ٹی ڈی سی موٹل (PTDC Motel) کے علاوہ اب ایک نیا ہوٹل بھی بن چکا ہے۔ ہم گاڑی میں ہی بیٹھے رہے، سلیم اور عبدالرؤف اس کی معلومات لینے گئے تاکہ کیمپنگ کے ساتھ ساتھ ایک کمرہ بھی حاصل کر لیا جائے۔ وہ کیا ہے کہ کمرہ اس لئے لیا جاتا ہے کہ ایک تو کمرے کے ساتھ غسل خانہ ”مفت“ ہوتا ہے دوسرا کوئی دوست خیمے کی بجائے کمرے میں رہنا چاہے تو رہ لے۔

پتہ چلا کہ بلتستا ن کے چیف جسٹس صاحب اس ہوٹل میں ٹھہرے ہوئے ہیں لہٰذا عام عوام کو کمرہ نہیں مل سکتا۔ یوں ہم کیمپنگ کے لئے کسی اچھی جگہ کا انتخاب کرنے لگے۔ تھوڑی دور سے لڑکوں کے شور شرابے کی آواز آ رہی تھی، ہم اس طرف چل پڑے۔ وہاں پہنچے تو پتہ چلا کہ یہاں تو ”بون فائر“ چل رہا ہے اور دیکھنے میں تو یہ سولہ سترہ سال کے سکول کے بچے لگ رہے تھے مگر تب ہمیں کیا پتہ تھا کہ یہ اصل میں کون ہیں۔ یہ لوگ راما کے خوبصورت میدان کو چھوڑ کر جہاں سے جنگل شروع ہوتا ہے وہاں پر درختوں میں خیمے لگائے ہوئے تھے۔ ہم ادھر پہنچے ہی تھے کہ ان کا استاد ہمارے پاس آیا، تھوڑی بہت سلام دعا اور تعارف ہوا۔ تعارف کے مطابق تو وہ گلگت کے کسی سکول کے بچے تھے اور یہ ان کا استاد ہے۔ استاد کہنے لگا کہ آپ یہیں ہمارے پاس ہی خیمے لگاؤ۔ گپ شپ کرتے ہیں اور بون فائر کے مزے لیتے ہیں۔ پتہ نہیں سب کیوں راضی ہو گئے، شاید اس لالچ سے کہ ہم نے بھی بون فائر کرنا ہے چلو ان کے ساتھ ہوں گے تو لکڑیوں کا بندوبست نہیں کرنا پڑے گا۔ خیر میرا دل تھا کہ ہم راما کے بڑے میدان کے اس پار خیمے لگائیں تاکہ ساری رات برف پوش چوٹیوں سے چاندنی ٹکرا ٹکرا کر ہم تک پہنچے اور روح تک اتر جائے۔ خیمے لگانے بارے میں بحث شروع ہوئی اور یہ ہمارے سفر کی پہلی طویل بحث تھی۔ میں اور عبدالرؤف اس شور شرابے سے دور چاندنی میں خیمے لگانے کے حق میں تھے اور باقیوں میں کوئی خاموش تھا تو کوئی ادھر ہی لگانے کے حق میں تھا۔ خیر سلیم کا خیال تھا کہ ہم ادھر ہی ان بلتیوں کے پاس خیمے لگائیں تو پھر ہم بھی راضی ہو گئے۔ مگر کوئی نہیں جانتا تھا کہ آج رات ہم پر کیا گزرنے والی ہے۔

راما کے جنگل سے گزرتا ہوا راستہ
ماحول کافی سرد ہو چکا تھا اور بہت ٹھنڈ لگ رہی تھی۔ میں گاڑی سے اترنے سے پہلے ہی جیکٹ پہن چکا تھا مگر پیروں میں ابھی بھی کھلی جوتی تھی۔ خیمے لگانے اور ان میں ضروری سازوسامان جیسے سلیپنگ بیگ وغیرہ رکھنے کے بعد میں نے سب سے پہلے بوٹ پہنے۔ اتنے میں وہ بلتی بچے اور ان کا استاد مل بیٹھنے کا دعوت نامہ لے کر آ گئے اور ہم ان کے ساتھ بون فائر میں شریک ہونے چل پڑے۔ صبح سے سفر کر رہے تھے اور بہت تھکاوٹ ہو چکی تھی اس لئے ہمارا خیال تھا کہ تھوڑی دیر موج مستی کرتے ہیں پھر آرام کریں گے۔


ان بلتی بچوں میں سے ایک ڈھول بجا رہا تھا اور باقی شینا یا بلتی زبان میں گاتے ہوئے آگ کے گرد گول دائرے میں ناچ رہے تھے۔ اس طرح کا ناچ اور وہ بھی جنگل میں اوپر سے کسی عجب زبان میں منتر بھی چل رہے ہیں۔ مجھے تو سب عجیب ہی لگ رہا تھا۔ خیر انہوں نے ہمیں بھی ناچنے اور ہلہ گلہ کرنے کی دعوت دی اور پکڑ پکڑ کر دائرے میں شامل کرتے۔ اجی میں ٹھہرا اس معاملے میں شرمیلا، لہٰذا میں تصویر کشی کرتا رہا اور سب سے پہلے سلیم، پھر عباس، عبدالرؤف، عبدالستار اور پھر میر جمال بھی ناچنے لگا۔ ویسے اپنے ان دوستوں کو ایک ساتھ ناچتے ہوئے میں پہلی بار دیکھ رہا تھا اور بہت ہی لطف اندوز ہو رہا تھا کیونکہ انہوں نے ناچنا کیا خاک تھا بس گھوڑے کی طرح ”دولتیاں“ مارتے ہوئے ہاتھ لہرا رہے تھے۔ بہرحال مزہ آ رہا تھا۔ بچوں کا استاد جا چکا تھا اور اب بلتی بچے کچھ کھل ڈل کر باتیں کرنے لگے۔ بلتیوں نے کہا کہ اب آپ اپنی پنجابی میں گانا گاؤ اور سب ناچتے ہیں۔ عباس اور عبدالرؤف نے کمال کر دیا۔ منجی تو منجی تھی پتہ نہیں کہاں کہاں ”ڈانگ“ پھرواتے اور پٹواریوں کے لڑکے سے آنکھیں مرواتے۔ انہوں نے ان بلتیوں کو نرگس کی طرح نچوایا۔ تھوڑا سکون ہوا تو ہم میں سے کسی نے ”اے وطن پیارے وطن“ گنگنایا۔ بس پھر سب شروع ہو گئے اور بات ”زورداری ی ی ی- کھپے“ کے نعروں پر ختم ہوئی۔ بلتیوں کو تو جیسے جوش آ گیا، انہوں نے اپنی مقامی زبان میں کچھ لفظ بولنے شروع کر دیے اور اتنا ناچ کہ بے ہوش ہونے پر آ گئے۔ وہ جو لفظ بول رہے تھے وہ یہ تھے۔
”چُرُک چُرُک۔ ۔۔ چُرُک چُرُک۔۔۔ چُرُک چُرُک“
ہمیں نہیں پتہ تھا کہ ان الفاظ کا مطلب کیا ہے، جب ان سے پوچھا تو وہ کہنے لگے کہ ان کا کوئی مطلب نہیں بس جس طرح آپ اپنی زبان میں ”بلے بلے“ یا ”شاوا شاوا“ کہتے ہیں بالکل اسی طرح ہم ”چرک چرک“ کر رہے ہیں۔ خیر کچھ دیر تو ہم بھی انہیں ”چرک، چرک“ کرتے دیکھتے اور یہ سوچتے رہے کہ اس کا مطلب بلتیوں نے ٹھیک بتایا ہے یا پھر کہیں یہ کوئی گالی تو نہیں یا پھر کہیں یہ کوئی جادو ٹونہ تو نہیں کر رہے۔ خیر اردو لغت کہتی ہے کہ چُرُک کا مطلب ”پرندوں کی چیں چیں“ ہے۔ اب پتہ نہیں یہی ہے یا کچھ اور مگر اس چُرُک کے منتر نے اس رات ہمارا وہ حال کیا کہ اب یہ لفظ ساری زندگی نہیں بھولے گا۔


راما
کئی گھنٹوں کی چرک چرک سننے کے بعد رات کے ایک بجے آگ ٹھنڈی ہونے لگی اور ہم نے ان سے اجازت لی کہ ہم سارے دن کے تھکے ہوئے ہیں، اس لئے سونے چلتے ہیں۔ مگر بلتیوں نے کہا کہ نہ جی نہ آج تو ساری رات ہم آپ کی خاطر کریں گے۔ بچوں کو سمجھایا کہ آپ زیادہ سے زیادہ چار پانچ گھنٹے کی مسافت سے آئے ہو اور ہم دو دن سے چلے ہوئے ہیں اور ابھی بھی چودہ گھنٹے کا سفر کر کے آئے ہیں اس لئے سونے جا رہے ہیں۔ خیر ان سے زبردستی ہی جان چھڑائی۔ ہم سب اپنے اپنے خیموں میں چلے گئے۔ ڈرائیوروں نے گاڑی میں ہی سونے کا فیصلہ کیا تھا اور وہ پہلے سے ہی سو رہے تھے۔ ہم سات دوستوں نے تین خیمے لگائے تھے۔ ایک خیمے میں عبدالستار اور میرجمال، ایک میں عبدالرؤف اور نجم اور ایک خیمے میں سلیم، عباس اور میں۔ اچانک ایک خیمے سے آواز بلند ہوئی ”اوئے مر گیا ااا“۔ یہ بالکل اسی طرح کی آواز تھی جو عبدالرؤف نے سفر کے دوران عباس کو دی تھی۔ ادھر ہمارے خیمے سے عباس نے ایسے الفاظ میں جواب دیا کہ مجھے یقین ہی نہیں ہو رہا تھا کہ یہ عباس بول رہا ہے۔ اتنے میں تیسرے خیمے کی دنیا بھی جاگ اٹھی۔ پھر بارود بھرے الفاظ کی ایسی بارش شروع ہوئی کہ ان تین خیموں کے لوگوں کو روندتی ہوئی پتہ نہیں کس کس صدر اور وزیراعظم کے محل تک پہنچی اور پھر تھکاوٹ کی مار مر گئی۔ اِدھر تو خاموشی ہو گئی مگر وہ بلتی تو ابھی تک دور کہیں چیخ چیخ کر چرک چرک کر رہے تھے۔ ابھی ہمیں نیند آنے ہی لگی تھی کہ ان جنگلی چرکوں نے ہمارے خیموں کے گرد ”جیگا لالا“ مچا دیا۔ پتہ نہیں کہاں سے سپیشل گلے لگوا کر آئے تھے، جب بولتے تو ایسا لگتا کہ ہمارے کانوں کے ساتھ ساتھ خیمے بھی پھٹ جائیں گے۔ پہلے سوچا کہ ان کو منع کیا جائے مگر عباس نے کہا کہ چپ کر کے لیٹے رہو، بچے ہیں خود ہی تھک کر باز آ جائیں گے۔ مگر ان میں آرام نام کی کوئی چیز نہیں تھی۔ اب وہ ہمارے خیموں کو آگ سمجھ کر اس کے اردگرد چرک چرک کرتے ناچ رہے تھے۔

اوہ کوئی جاؤ، ان کے استاد کو بتاؤ کہ ان جنگلیوں کو سمجھائے۔ کوئی ان کا ترلا منت ہی کرو کہ چپ کر جائیں۔ ایک طرف ٹھنڈ تھی جو کہتی تھی کہ آج ہی ہوں اور دوسری طرف چُرُک چُرُک کے آگے تو پہاڑ بھی عاجز آ رہے تھے۔ جھرنوں نے خاموشی اختیار کر لی تھی۔ چاند ڈر کر بھاگ چکا تھا۔ درخت بت بنے کھڑے تھے اور ہم اس جنگل میں بے رحم جنگلیوں کی خوراک بنے ہوئے تھے۔ صاف پتہ چل رہا تھا کہ ہماری یہ رات پریوں کے نظارے سے جتنی اچھی شروع ہوئی تھی اس کا اختتام اتنا ہی برا ہونے والا ہے۔

Posted: 28 Jul 2012 02:02 PM PDT
 
Title name of the book is "Muskurahat Ki Maut" The Death of Smile. Written by Sarfaraz Ahmad Rahi. A mysterious social story in Urdu language. Download in pdf format to read offline.
Download link

http://www.mediafire.com/?6w4k6ph70k4loel
All the books are share here just for education, reference and beat free entertainment purpose only. If you really like books, then please support the author and publisher by purchasing a hard copy from your nearest book seller. Thanks
Posted by Picasa
Posted: 28 Jul 2012 01:39 PM PDT
 
Title name of the book is "Muntakhib Ghazliat" . Selected Ghazals of Amjid Islam Amjid. Beautiful Urdu poetry in Pdf format.
Download link
http://www.mediafire.com/?dqgsx33ew0ob3b8



All the books are share here just for education, reference and beat free entertainment purpose only. If you really like books, then please support the author and publisher by purchasing a hard copy from your nearest book seller. Thanks
Posted by Picasa
Posted: 28 Jul 2012 01:32 PM PDT
 
Title name of the book is "Hum Us Ke Hain" Written by Amjid Islam Amjid. Download in pdf format.
Download link
http://www.mediafire.com/?xgyvtx5wc9tzs4a



All the books are share here just for education, reference and beat free entertainment purpose only. If you really like books, then please support the author and publisher by purchasing a hard copy from your nearest book seller. Thanks
Posted by Picasa
Posted: 28 Jul 2012 01:27 PM PDT
 
Title name of the novel is "Wadi-e-Guman Main" Written by Rahim Gul.  A social Urdu novel in pdf format.
Download link
http://www.mediafire.com/?a9hf1b1bg6u36cb



All the books are share here just for education, reference and beat free entertainment purpose only. If you really like books, then please support the author and publisher by purchasing a hard copy from your nearest book seller. Thanks
Posted by Picasa
Posted: 28 Jul 2012 01:16 PM PDT
 
Title name of the novel is "Shab-e-Gazeeda" Written by Aneeza Syed. A romantic and social story in Urdu language. Download in pdf format.
Download link



All the books are share here just for education, reference and beat free entertainment purpose only. If you really like books, then please support the author and publisher by purchasing a hard copy from your nearest book seller. Thanks
Posted by Picasa
Posted: 28 Jul 2012 01:08 PM PDT
 
Title of the novel is "Dracula" Written by Javed Bukhari. A horror novel in Urdu pdf. 


All the books are share here just for education, reference and beat free entertainment purpose only. If you really like books, then please support the author and publisher by purchasing a hard copy from your nearest book seller. Thanks
Posted by Picasa

Sunday, August 12, 2012

Posted: 27 Jul 2012 09:30 PM PDT



Tommy and Sally were playing together.
Tommy had some small colorful balls with him. Sally had some biscuits with her. Tommy told Sally that he will give her all his balls in exchange for her biscuits. Sally agreed.
Tommy kept the biggest and the most beautiful ball aside and gave the rest to the Sally. Sally gave him all her biscuits as she had promised.
That night, Sally slept peacefully. But Tommy couldn’t sleep as he kept wondering if Sally had hidden some biscuits from him the way he had hidden his best ball.
Moral: You think in the way you act. If you don’t give your hundred percent in a relationship, you’ll always keep doubting if the other person has given his/her hundred percent. This is applicable for any relationship.
Give your hundred percent to everything you do and sleep peacefully.(...)
Continue reading Give Your Hundred Percent


Special Tutorials in Urdu

I have been publishing tutorials in Urdu language and I published video and text tutorials on many topics on this blog. But I would say these tutorials which are completed; are my special. So you should check out them now: 

Posted: 27 Jul 2012 05:08 AM PDT
 
Monthly Urdu magazine "Rida Digest" for the month of August 2012 in pdf format. Download link


All the books are share here just for education, reference and beat free entertainment purpose only. If you really like books, then please support the author and publisher by purchasing a hard copy from your nearest book seller. Thanks
Posted by Picasa
Posted: 27 Jul 2012 05:02 AM PDT
 
Monthly Urdu magazine "Sarguzasht Digest" for the month of August 2012 in pdf format.

Download link

All the books are share here just for education, reference and beat free entertainment purpose only. If you really like books, then please support the author and publisher by purchasing a hard copy from your nearest book seller. Thanks
Posted by Picasa

Add Of The Day